Pakistan vs West Indies, 1st Test Day 4: As it happened

Pakistan need eight wickets on final day of first Test to take lead against West Indies who need 241 more runs to win.

By: Express Web Desk | Updated: October 17, 2016 1:28 am
ive cricket score, live cricket, cricket live score, pakistan vs west indies live, live pakistan vs west indies, pak vs wi live, live pak vs wi, wi pak live, live pak wi, cricket Pakistan suffered a batting collapse in the second innigns. (Source: Reuters File)

Pakistan inched closer to victory in the first Test against West Indies after picking up two wickets before close of play on Day 4 in Dubai with the Caribbean team needing 241 more runs to win the match in the fifth and final day. West Indies were 95/2 at stumps with Marlon Samuels and Darren Bravo at the crease. Mohammad Amir picked up both wickets for Pakistan. Earlier, leg-spinner Devendra Bishoo picked up his career best figures of 8-49 as Pakistan suffered a dramatic second-innings batting collapse, leaving West Indies to chase 346 runs to win their first ever day-night match. Having bowled out West Indies for 357 in the first innings with Yasir Shah picking up a five-wicket haul, Pakistan had a 222-run lead from first innings but captain Misbah-ul-Haq didn’t enforce the follow-on.  They were bowled out for 123 in the second innings.

For all the latest Sports News, download Indian Express App now

  1. H
    Humera
    Oct 16, 2016 at 11:50 am
    Ha ha ha looks like india is all depressed and it should be because india is a looser.
    Reply
    1. R
      RAJA GHAZANFAR
      Oct 17, 2016 at 6:44 am
      اہم ترین اسپورٹس نیوز برائے تمام اردو اخباراتlt;br/gt;۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔lt;br/gt;lt;br/gt;خبر کی سرخی،lt;br/gt;lt;br/gt; غضنفر آددوالیہ کی دوبئی کرکٹ ٹیسٹ میچ کی پیشین گوئی سچ ثابت ہو گئی ہےlt;br/gt; ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔lt;br/gt;lt;br/gt;خبر کا مکمل متن،lt;br/gt;lt;br/gt; ؔپ یقین کریں یا نہ کریں مگر یہ واقعی حقیقت ہے کہ پاکستان کے ایک 75 سالہ بزرگ شہری اور پاکستان کے مشہور کرکٹ کوچ ماسٹر عبالعزیز کے شاگرد اور سندھ مسلم سائنس کالج کراچی کرکٹ ٹیم کے سابق طالب علم اور کرکٹر راجہ غضنفر علی خان کی دوبئی خرکٹ ٹیسٹ میث کے بارے میں پشین گوئی واقعی درست ثابت ہو گئی ہے انہوں نے دوبئی ٹیسٹ کے تیسرے دن کھیل کے اختتام پر یہ پشین گوئی کی تھی کہ دوبئی کرکت ٹیسٹ کی وکٹ نے بولروں کے لیے ناکام ثابت ہو چکی ہے مگر یہ وکٹ کھیل کے ؔخری دو دن ٹرن لے سکتی ہے اور آئندہ دو دن زیادہ وکٹیں گرنے کی امید ہے اور یہ میچ درا بھی ہو سکتا ہے اور واقعی اس کی پشنگوئی کے مطابق 16 وکتین گر چکی ہیں اور یہ میچ اب دلچسپ سورت حال اختیار کر چکا ہے پاکستان کی کوشش ہے کہ وہ یہ میث ضرور جیتے مگر دوسری جانب ویسٹ انڈیز کسی بھی صورت میں یہ میچ ہارنا نہیں چاہتی ہے وہ میچ ے آخری روز 246 رنز بنانے کے لیے نہایت ہی سست رفتاری سے بیٹنگ کرے گی اور ہار سے بچنے کے لیے وہ اس میچ کو کروا سکتی ہ کیونکہ پاکستان کے بالروں نے ہر اوور مین تین چار گیندیں بائونسر کروانے کے عادی ہیں جس سے پاکستان کرکت ٹیم بد نام ہو سکتی ہے امکان یہی ہے کہ ویسٹ انڈیز نہایت ہی سست رفتاری اور کافی احتیاط سے بیٹنگ کرے گی اور 70 فی صد تک اس میچ کو ڈرا کروانے کو ترجیج دے گی کیونکہ ویٹ انڈیز کی بیٹنگ لائنز بھی کافی مضبوط ہے اور وہ میچ جیتنے کے لیے جلد بازی اور غلط اسٹروک کرنے کی غلطی بالکل نہیں کرے گی 70 فی صد یہ میچ ڈرا ہو سکتا ہے 20 فی صد میچ جیت سکتی ہے اور 10 فیصد میچ ہار سکی ہے lt;br/gt;lt;br/gt; یاس رہے کہ غضنفر نے ورلد کپ کے بارے میں ہمیشہ پشین گوئیاں بھی کی ہیں اور ان کی تمام پشین گوئیاں 90 فی صد درست ثابت ہو چکی ہین کیونکہ وہ 1955 تا 1965 تک اپنے اسکول اور کالج کی کرکٹ ٹیم کے ایک اچھے کرکٹر تھے ان کے زمان میں کرکٹ ایک خطرناک گیم تھی کیونکہ وہ کرکٹ پکی سیمنت کی بنی ہوئی پچ پر کھیلی جاتی تھی اور فاسٹ بالروں کی گیندیں سیدھی منہ پر لگتی تھین جن کو کھیلنے کے لیے کافی مہارت اور پھرتی کی ضرورت ہوتی تھیجب کہ آج کل کی کرکت نہایت ہی آسان ہے کیونکہ یہ نرم ٹرف زمین پر کھیلی جاتی ہے اور ایک اناڑی کھلاڑی بھی بے تکی سے بلا گھما کر چھکا مار سکتا ہے اور سنچری اسکور کر سکتا ہے جب کہ ستر سال پہلے کرکٹ کھیلنا ایک مشکل ترین گیم تھی۔lt;br/gt;lt;br/gt; راجہ غضنفر علی خان نے پاکستان کی کرکت تیم کے کھلاڑیوں کو مفید مشورہ دیا ہے کہ وہ کرکٹ کو فیئیر انداز سے کھیلنے کی کوشش کرین اور اپنے بالروں کو جان بوجھ کر بائونسر کروانے ، شارٹ پچد گیندیں پھینکنے اور وائیڈ بال کروانے سے منّع کریں کیونکہ اس سے ہماری ککٹ ٹیم کی بد نامی ہو سکتی ہے lt;br/gt;۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔lt;br/gt;lt;br/gt;خبر نگارlt;br/gt;lt;br/gt; راجہ غضنفر علی خان آددوالیہ lt;br/gt; اخباری مضمون نگارlt;br/gt; مکان نمبر-5، استریٹ نمبر ۔10، اقبال ٹائون ، راولپنڈی ، 46300lt;br/gt;lt;br/gt;تاریخ 16 اکتوبر 2016 lt;br/gt;۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
      Reply